خدا کی راستبازی جو خوشخبری میں ظاہر ہوئی

 

<رومیوں 16:1-17 >
”کیونکہ میں انجیل سے شرماتا نہیں ۔ اِسلئے کہ وہ ہر ایک ایمان لانے والے کے واسطے پہلے یہودی پھر یونانی کے واسطے نجات کیلئے خدا کی قدرت ہے ۔ اِس واسطے کے اُس میں خدا کی راستبازی ایمان سے اور ایمان کیلئے ظاہر ہوتی ہے جیسا کے لکھا ہے کہ راستباز ایمان سے جیتا رہے گا “۔

ضرور ہے کہ ہم خدا کی راستبازی کو پائیں

پولوس رسول مسیح کی خوشخبری سے شرماتا نہین تھا ۔ اُس نے بڑی دلیری سے خوشخبری کی شہادت دی ۔ تاہم یسوع پر ایمان لانے کے باوجود اُنکے رونے کے اسباب میں سے ایک سبب اُنکے گناہ ہیں ۔ یہ اُنکے خدا کی راستبازی کو قبول نہ کرنے کی لا علمی کی وجہ سے بھی ہے ۔ ہم خدا کی راستبازی پر ایمان لانے اور اپنی انسانی راستبازی کے ایمان کو ترک کرنے کے باعث نجات پا سکتے ہیں ۔
کیو پولوس رسول خوشخبری سے شرماتا نہ تھا ؟ اول تو یہ ِ کیونکہ خدا کی راستبازی اِس خوشخبری میں ظاہر ہوئی تھی ۔ خوشخبری جسکو یونانی میں ‘ایواجیلین ‘ کہتے ہیں کا مطلب ’خوشی کی بشارت‘ ہے ۔ جب یسوع مسیح بیت الحم میں پیدا ہوئے تو خدا کا فرشتہ چرواہوں کپر جو رات کو اپنے گلہ کی نگہبانی کر رہے تھے ظاہر ہوا اور بتایا ”عالمِ بالا پر خدا کی تمجید ہو اور زمین پر اُن آدمیوں میں ن سے وہ راضی ہے صلح“ (لوقا14:2) یہ خوشی کی بشارت تھی کہ ؛ زمین پر جن آدمیوں سے وہ راضی ہے صلح‘ ۔ خدا وند کی خوشخبری ہمیں سب گناہوں سے مخلص دیتی اور دنیا کے گناہوں کو دور کر دیتی ہے ۔ یسوع نے ہمارے سب گناہ دھو ڈالے ہیں ۔ یسوع نے اُن سب کے گناہوں کو جو بد حواسی کی غلاظت سے بھرے کپڑوں کی طرح گندگی میں پڑے ہوئے تھے اور جو گناہ کی دلدل کی کیچڑ سے بھرے ہوئے تھے کے گناہوں کو دھو ڈالا ۔
اَول تو پولوس نے کہا کہ خدا کی راستبازی خوشبری میں ظاہر ہوئی تھی ۔ خدا کی راستبازی ہمیں اِس لائق بناتی ہے کہ مقدس اور راست ٹھہریں ۔ یہ ہمیں پاک ٹھہراتی اور ابدی زندگی حاصل کرنے کے لائق بناتی ہے ۔
انسان کی راست بازی ہے کیا ؟ جب ہمارے پاس فخر کرنے کیلئے کچھ ہوتا ہے تو ہم لوگ خدا کے نزدیک اپنے آپ کو نمایا کرنا پسند کرتے ہیں۔ اگر کوئی اپنے نیک کاموں کے باعث اپنے آپ پر فخر کرتا ہے تووہ انسانی راستبازی کی شبیہہ بناتا ہے ۔ تاہم یسوع کا راست عمل جس نے ہمیں ہمارے سب گناہوں سے مخلصی دی خدا کی را ستبازی کو خوشخبری میں ظاہر ہونے کی اجازت دیتا ہے ۔ یہی خدا کی راستبازی ہے ۔
اِن دِنوں اکثر مسیحی خدا کی راستبازی کی خوشخبری سے واقفیت حاصل کرنے کے بغیر ہی انجیل کی منادی کر رہے ہیں ۔ وہ کہتے ہی کہ”اگر آپ یسوع پر ایمان لائیں تو آپ مخلصی پائیں گے اور دولتمند ہو جائیں گے۔ تاہم ایسے لوگ خدا کی راستبازی کی منادی نہیں کر رہے ہیں ۔ انجیل ہر ایک دوسری شے سے زیادہ مشہور و معروف دکھائی تو دیتی ہے مگر اکثر لوگ خوشخبری سے ابھی تک بے بہرہ ہیں ۔ یہ بالکل اِس حقیقت کی مانند ہے کہ بائبل دراصل سب سے زیادہ بکنے والی کتاب ہے مگر لوگ ابھی تک اِسکی فہرست کو بھی نہیں جانتے ہیں ۔ اِس دنیا میں سب سے زیادہ قیمتی اور سودمند شے خوشخبری ہی ہے جو ہمیں خدا سے پہنچی ہے ۔
”اِس واسطے کے اُس میں خدا کی راستبازی ایمان سے اور ایمان کیلئے ظاہر ہوتی ہے “۔ خدا کی خوشخبری بیابان میں ٹھنڈے اور میٹھے پانی کے کُنویں کی مانند ہے ۔ یسوع اُن گنہگاروں کیلئے آیا جو گناہ سے بھرے پڑے اور اَن گِنت گناہ کر چکے تھے اور اُن کے سب گناہوں کو ایک ہی بار دھوکر اُن سے دور کر دیا ۔ تاہم لوگ اُسکی ، اُس راستبازی کے تحفہ کو رد کر رہے ہیں ۔ جس نے دنیا کے گناہوں کو دھو ڈالا ، اور اپنی انسانی راستبازی کو قائم کرنے کی کوشش کر رہے ہیں ۔ وہ لوگ جو اپنی راستی کو بلند کرنے کی جدوجہد میں (خدمت ، اپنے آپکو وقف کرتے ، جانفشانی ، قربانی ، توبہ کی دُعا ، خدا وند کا دن ماننا ، خدا کے کلام کا ترجمہ کرنا ) اور اِس طرح کا بہت کچھ تو کرتے ہیں مگر خدا کی اِس نعمت کا انکار کرتے ہیں تو پھر وہ بھی ایسے ہی لوگ ہیں جو اُسکی راستبازی کو رد کر دیتے ہیں ۔ کوئی بھی خدا کی راستبازی کو صرف تب ہی حاصل کر سکتا ہے ۔ جب وہ اپنی انسانی راستبازی کے وسیلہ نجات پانے کے ایمان کو ترک کر دے ۔

اُنہوں نے انجیر کے پتوں کو سی کر اپنے لئے لباس بنایا

پیدائش 21:3میں لکھا ہے ”اور خدا وند خدا نے آدم اور اُسکی بیوی کے واسطے چمڑے کے کُرتے بنا کر اُنکوپہنائے“۔ پہلے آدم نے شیطان کی مکاری میں پھنسنے کے سبب خدا کے خلاف گناہ کیا ۔ آدم اور حوا نے گناہ میں گرنے کے بعد فی الفور انجیر کے پتوں کو اکٹھا کر کے سی لیا اور اپنے آپکو چھپایا ۔
انجیر کے پتوں کو سی کر بنایا گیا لبا س چمڑے سے بنائے گئے کُرتوں سے ایک نمایاں فرق رکھتا تھا ۔ بالکل ایسا ہی فرق انسانی راستبازی اور خدا کی راستبازی میں ہے ۔ پیدائش 7:3میں لکھا ہے ”اور انہوں نے انجیر کے پتوں کو سی کر اپنے لئے لنگیاں بنائیں “ ۔ کیا آپ نے کبھی مولی کے پتوں کو آپس میں باندھا ہے ؟ ہم کورین لوگ مولی کے پتوں کو مولی سے کاٹتے اور اُنہیں خشک کرنے کیلئے چاولوں کی مونجھی کے بھو سے کے ساتھ باندھ کر رکھتے اور سردیوں میں اِسکے ساتھ ہم پھلی کے پیسٹ کا سالن پکاتے ہیں ۔ یہ بہت ہی مزیدار ہوتا ہے !
آدم اور حوا نے گناہ میں گرنے کے بعد انجیر کو باندھ کر اپنے لئے لباس بنائے ۔ یہ انسانی راستبازی ، اپنی آزمائش ، اپنی قربانی اور نیک کاموں پر منبی اعمال کی ایک قِسم تھی یہ اُنکی اپنی راستبازی تھی نہ کہ خدا کی ۔ حقیقت یہ ہے کہ اُنکا انجیر کے پتوں سے اپنے لباس کو سینا ، خدا کے نزدیک ظاہر کتا ہے کہ وہ اپنے نیک کاموں کے ذریعے اپنے گناہوں کو چھپانے کی کوشش کر کے خدا کے نزدیک فخر کر رہے تھے ۔ اپنی راستبازی ، اپنے ہڈیوں ، اپنی قربانی ، اپنی آزمائش ، اپنی خدمات ، اور توبہ کی دُعاﺅں کو ایک لباس میں باندھنا اور اپنے طور پر گناہوں کو ڈھانکنا یہی وہ بُت پرستی ہے جو خدا کے نزدیک کسی کو انسانی راستبازی پر فخر دلاتی ہے ۔
یہ منصوبہ خدا میں تھا اِسلئے خدا نے اُنکے گناہوں کو ایک جانور پر لادا اور جانور کو ذبح کیا اُسکی کھال سے لنگیاں بنائیں اور آدم اور حوا کو اُن لُنگیوں سے مُلبس کیا ۔ اُس نے ہماری نجات کیلئے یہی علامت ٹھہرائی ۔ در حقیقت نباتاتی لباس جو انجیر کے پتوں کا بنایا گیا ایک دن کیلئے بھی کافی نہ تھا اور اِسے بار بار مرمت کروانا پڑتا خدا آدم اور حوا کو یہ کہتے ہوئے ابدی زندگی سے مُلبس کرتا ہے ، ” اے آدم اور حوا تم باہر آجاﺅ میں نے تمہارے لئے ایک جانور کی کھال کے کرتے بنائے ہیں کہ تمہیں اِس سے مُلبس کروں یہ اُس جانور کی کھال کے کرتے ہیں جو تمہارے لئے ذبح ہوا “ ۔ خدا وند نے آدم اور حوا کو چمڑے کے کرتے پہنائے جو آدم اور حوا کو نئی زندگی دینے کیلئے خدا کی راستبازی کے وسیلہ مبارک ٹھہرائے گئے تھے ۔ خدا وند خدا نے آدم اور اُسکی بیوی حوا کیلئے چمڑے کے کرتے بنائے اور اُنہیں پہنائے ، اِسی طرح خدا ایمانداروں کو راستبازی کی نجات سے مُلبس کرتا ہے ۔
تاہم انسان کی نجات جو خدا کی مہیا کردہ مخلصی سے جدا ہو گئی تھی انجیر کے پتوں سے بنے ہوئے نباتاتی لباس کی طرح بیکار تھی ۔ خدا نے ہمیں چمڑے کے کرتوں سے ملبس کیا ہے، یہی خدا کی راستبازی ہے ۔ خدا وند نے ہمیں اپنے جسم اور خون کے وسیلہ گناہوں کی معافی کے ذریعے خدا کی راستبازی سے ملبس کیا ہے ۔ اُس نے اپنے بتپسمہ کے ذریعے ہمارے سب گناہوں کو دور کیا اور ہمارے گناہوں کی خاطر اُس پر سیاست ہوئی اور وہ مصلوب ہو گیا ۔ جب ہم خدا کی راستبازی پر یسوع کے بتپسمہ اور خون کے وسیلہ ایمان لاتے ہیں تو خدا ہمیں گناہوں کی معافی سے آراستہ کرتا ہے ۔ یہی وہ خوشخبری ہے جو گنہگاروں کو اُنکے گناہوں سے مخلصی دیتی ہے ۔
بہت سے ایسے لوگ ہیں جو خدا کی راستبازی کو رد کرتے اور اپنی راستبازی کو قائم کرنے کی کوشش کر رہے ہیں ۔ اُنہیں اپنی انسانی راستبازی اور خدا کی راستبازی میں امتیاز رکھنا چاہیے ۔ رومیوں 4-1:10میں مرقوم ہے ، “ اے بھائیو! میرے دل کی آرزو اور اُنکے لئے خدا سے میری یہ دُعا ہے کہ وہ نجات پائیں ۔ کیونکہ میں اُنکا گواہ ہوں کہ وہ خدا کے بارے میں غیرت تو رکھتے ہیں مگر سمجھ کے ساتھ نہیں ۔ اِسلئے کہ وہ خدا کی راستبازی سے ناواقف ہو کر اور اپنی راستبازی کو قائم کرنے کی کوشش کر کے خدا کی راستبازی کے تابع نہ ہوئے ۔ کیونکہ ہر ایک ایمان لانے والے کی راستبازی کے لئے مسیح شریعت کا انجام ہے ۔“ اسرائیلی اپنی راستبازی کو قائم کرنے کے لئے شریعت پر زور دیتے تھے چنانچہ وہ خدا کی راستبازی سے ناواقف ہیں ۔ خدا نے آدمیوں کو شریعت اِس لئے عطا کی کہ وہ گناہ کو پہچانیں ۔ لوگ دس احکام کے وسیلہ گناہ کو جان چکے ہیں اور اُسکی نجات کی راستبازی پر ایمان لانے سے گناہوں سے خلاصی پا گئے ہیں جو خیمہ گاہ کے قربانی کے نظام کے وسیلہ اُنکو گناہوں سے بچاتی ہے۔ اسلئے خیمہ گاہ کی قربانی نئے عہد نامہ میں یسوع کے بالکل خد اہونے کی نمائندگی پر دلات کرتی ہے ۔ تاہم اسرائیلی خدا کی اِس اتنی بڑی نجات سے غافل ہیں ۔

کیوں یسوع نے بتپسمہ لیا تھا ؟

یسوع نے کیوں بتپسمہ لیا تھا ۔ یوحنا بتپسمہ دینے والے نے یسوع کو اسلئے بتپسمہ دیا تاکہ اِس دنیا کے سب گناہوں کو دور کر دے ۔ یسوع نے یوحنا بتپسمہ دینے والے کو بتپسمہ پانے سے چند لمحے پہلے بتایا کہ ” اَب تو ہونے ہی دے کیونکہ ہمیں اِسی طرح ساری راستبازی کو پورا کرنا مناسب ہے “ (متی 15:3) ۔ یسوع کے بتپسمہ لینے کا یہی سبب تھا ۔ اُس نے بتپسمہ لیا تاکہ وہ بنی نوع انسان کے گناہوں کو دھو سکے ۔ اُس نے بتپسمہ پانے کے وسیلہ اِس دنیا کے گناہوں کو دور کر دیا ۔ ”دیکھو یہ خدا کا برہ ہے جو دنیا کا گناہ اُٹھالے جاتا ہے “(یوحنا 29:1) اُس نے گناہوں کو اپنے اوپر لاد لیا اور گناہوں کا کارہ ادا کرنے کیلئے مصلوب ہو گیا ۔ مگر اسرائیلی ابھی تک ایمان نہیں لائے کہ یسوع گنہگاروں کا کامل نجات دہندہ گِنا گیا ہے ۔
اسرائیلیوں نے اپنے آپکو خدا کی راستبازی کے سپرد نہیں کیا لیکن ہر ایک ایمان لانے والے کیلئے یسوع شریعت کا انجام ہے ۔ شریعت کے انجام کا مطلب ہے کہ یسوع نے دنیا کے تمام گناہوں کو دور کر دیا ۔ شریعت کی لعنت سے سب ایمانداروں کو پاک ٹھہرانے کیلئے مسیح کی عدالت ہوئی تھی ۔ اُس نے شریعت کی لعنت کو ختم کر دیا ۔ اُس نے سب لوگوں کو اُنکے گناہوں سے آزاد کر دیا ۔ یسوع نے ساری انسانیت کے گناہوں کو دور کرنے کیلئے بتپسمہ لیا تھا ۔ اُس نے دنیا کے تمام گناہوں کو اپنے جسم پر لینے کیلئے اِسے یوحنا بتپسمہ دینے والے کے سپرد کیا کے وہ اُسے بتپسمہ دے اور اِسکے وسیلہ دنیا کے تمام گناہوں کو اُسکے جسم پر لاد دے ۔ اِسطرح اُس نے سب لوگوں کو اُنکے گناہوں سے رہائی بخشی ۔ اُس نے شریعت کی لعنت کی عدالت کو بتپسمہ اور مصلوب ہونے کے وسیلہ ختم کیا اور دنیا کے گناہوں کو دور کر دیا ۔ اُس نے ہمیں شریعت کی لعنت اور عدالت سے کامل طور پر مخلصی بخش دی ہے ۔
یہی شریعت کا انجام اور خدا کی راستبازی کے ذریعے نجات آغاز تھا ۔ یسوع نےت یوحنا بتپسمہ دینے والے سے بتپسمہ پانے اور صلیب پر جان دینے کے ذریعے مکمل طور پر دنیا کے گناہوں کو دور کرد یا ۔ کیسے ممکن ہے کہ کوئی یسوع کی راستبازی پر سچائی سے ایمان لا چکا ہو تو بھی اُسکے دل میں گناہ موجود ہو ؟ ” اِس واسطے کے اُس میں خدا کی راستبازی ایمان سے اور ایمان کیلئے ظاہر ہوتی ہے “ ۔ یسوع کا بتپسمہ اور خون خدا کی راستبازی گِنا گیا ہے ۔ خدا کی راستبازی پر ایمان لانے کیلئے یسوع کے بتپسمہ اور خون پر ایمان لانا ضرور ہے۔
خدا کی راستبازی یسوع کے بتپسمہ کے وسیلہ مناسب طور پر پوری ہوئی تھی ۔ میں چاہتا ہوں کہ آپ اِس پر ایمان لائیں ۔ پھر ہی آپ اپنے سب گناہوں سے مخلصی پائیں گے ۔ گنہگاروں کو راستبازی اِسلئے عطا کی گئی تاکہ یسوع کے بتپسمہ کے وسیلہ پاک ٹھہریں ۔ اس کے علاوہ یسوع کا مسلوب ہونا خدا کی راستبازی کی عدالت تھا ۔ ”مسیح شریعت کا انجام ہے “ مسیح شریعت کا انجام ہے “ خدا کی عدالت اُن سب پر آئے گی جنکی شرعیت کے اعتبار سے ابھی تک عدالت نہیں ہوئی ۔ خدا کی شریعت گناہ کو ظاہر کرتی ہے اور ثابت کرتی ہے کہ گناہ کی مزدوری از خود موت اور جہنم ہے ۔ اِسلئے یسوع کے بتپسمہ اور صلیبی خون نے شریعت کے لعنت کا خاتمہ کر دیا ۔ یسوع نے ہمارے سب گناہوں کو دھو کر دور کر دیا اور سار راستبازی کو پورا کر کے شریعت کو انجام دیا ۔

بیوقوفوں نے اپنی مشعلیں تو لے لیں مگر اُنکے ساتھ تیل نہ لیا

آئیں متی 13-1:25کو دیکھیں یہاں دس کنواریوں کی ایک تمثیل ہے جو اپنے دُلہا یعنی ہمارے خدا وند کی راہ دیکھ رہی تھیں ۔ آئیں اِس کلا م کے ذریعے دیکھیں کہ خدا کی راستبازی کیا ہے ۔
”اس وقت آسمان کی بادشاہی اُن دس کنواریوں کی مانند ہو گی جو اپنی مشعلیں لیکر دُلہا کے اِستقبال کو نکلیں ۔ اُن میں پانچ بیوقوف اور پانچ عقلمند تھیں ۔ جو بیوقوف تھیں اُنہوں نے اپنی مشعلیں تو لے لیں مگر اپنے ساتھ تیل نہ لیا ۔ مگر عقلمندوں نے اپنی مشعلوں کے ساتھ اپنی